نئے انتخابات ۔ نذیر ڈھوکی

2018 کے انتخابات اپنی ساکھ قاٸم نہیں کر سکے کیونکہ ایجنسیوں کا عمل دخل صاف نظر آ رہا تھا ، انتخابات سے قبل سواٸے کنگز پارٹی باقی سیاسی جماعتوں اور لیڈر شپ کو ہدف بنا کر دیوار سے لگا دیا گیا تھا ۔ سپریم کورٹ کے چیف جسٹس کے ریمارکس اور فیصلے سیاسی افراتفری ، معاشی بحران اور ملکی سلامتی کیلئے یی خطرناک ثابت نہیں ہوئے خود عدلیہ اور فوج ایسے اداروں کی ساکھ بھی بری طرح متاثر ہوئی ۔ انتخابی نتاٸج میں انجنیئرنگ نے عوامی سطح پر عوامی رائے…

دھرنے کی چاپ سے لرزتا اقتدار ۔ سبط حسن گیلانی

بہت مرتبہ ہمیں بتایا گیا کہ دھرنا ورنا کچھ نہیں ہے ریلیف لینے کی چال ہے ن لیگ کی اور پیپلز پارٹی کی جو مولانا کے لیے تجوریوں کے منہ کھول چکے ہیں ۔ ایک بزرگ مخبر (صادق ) نے تو یہاں تک بتایا کہ میاں نواز شریف کے بیٹے چار ارب کی تھیلی تو بھیج بھی چکے ۔ آج وہی بزرگ اور ان کے ساتھ بیٹھے گورے چٹے (تجزیہ کار ) بتا رہے ہیں کہ 9 ارب ڈالر کی ڈیل پکی ہو چکی ہے مگر یہ نہیں بتا رہے…

مولانا فضل الرحمنٰ نے مفتی کفایت اللہ اور حافظ حمد اللہ کو میڈیا پر آنے سے روک دیا۔

مسلح افواج اور سابق اعلی فوجی افسران پر تنقید کی وجہ سے جمعیت علما اسلام کے سربراہ مولانا فضل الرحمنٰ نے اپنے دو راہمناوں پر پابندی عائد کر دی ہے ۔ جمعیت علما اسلام کی طرف سے جاری کردہ فہرست میں مفتی کفائت اللہ اور مولانا حمد اللہ کے نام نکال دئے گئے ہیں۔ بتایا جا رہا ہے کہ دونوں راہنماوں پر پابندی عائد کی گئی ہے کہ وہ نجی چینلز پر جمعیت علما اسلام کی نمائندگی نہیں کریں گے ۔

سینٹر حمد اللہ کے والد 1930 میں چمن میں پیدا ہوئے ۔

حکومت پر تنقید کے جرم میں غیر ملکی قرار پانے والے سابق وزیر اور سینٹر حافظ حمد اللہ کے والد قاری ولی محمد قیام پاکستان سے قبل انگریز حکومت کے دور میں چمن میں پیدا ہوئے انہیں کوئٹہ کا ڈومیسایل جاری کیا گیا تھا ۔1930 میں پیدا ہونے والے قاری ولی اللہ کو 1975 میں پاسپورٹ جاری کیا گیا جس میں لکھا ہوا ہے وہ چمن میں پیدا ہوئے ۔ جاری کردہ چمن کے ڈومیسائل کی بنیاد پر قاری ولی محمد نے سرکاری سکول ٹیچر کی ملازمت بھی حاصل کی…

قتل عاشقاں سے منع کرتے تھے۔ نعیم اختر

اسی لیے تو قتلِ عاشقاں سے منع کرتے تھے العزیزیہ ریفرینس میں چار وقفوں کے بعد نواز شریف کو اسلام آباد ھاٸی کورٹ سے طبی بنیادوں پر منگل تک ضمانت مل گٸی ھے۔اس کیس کے قانونی،سیاسی،انسانی،اخلاقی،عدالتی،معاشرتی،طبی اور سماجی بے شمار پہلوہیں،جن پر بہت سے لکھنے والے اظہار خیال کررھے ھیں۔ھم اس موقع پر صرف اس کیس کے ایک پہلوپرمختصر بات کریں گے۔قارٸین کویاد ھوگاکہ دو تین سال قبل جب ھماری عدالتوں کے پانچ کے ٹولے نے بابا رحمتے کی قیادت میں نواز شریف اور ان کی حکومت کے خلاف ایک…

مولوی حمد اللہ اور ختنہ ۔ خالد پرویز

حضور جان کی امان پاؤں تو عرض کروں, آج ایک واقعہ ظہور پزیر ہوا ہے ۔ انیس سؤ ستر کی دہائی میں سرکاری سکول کے ہیڈ ماسٹر کی حیثیت میں ریٹائرمنٹ لینے والے قاری ولی محمد کے بیٹے اور سیکنڈ لیفٹیننٹ شبیر احمد کے والد، سابق سینیٹر مولوی حمداللہ کو تاحکم ثانی خلائی مخلوق قرار دیا گیا ہے۔ وہ دو ہزا دو سے دو ہزار چھ تک صوبائی وزیر صحت بھی رہے۔ آج میں جب اپنے بچوں کی روزی روٹی کی مشقت کر کے گھر آیا تو میرے والد صاحب…

سیاستدانوں کی گگلی ،آزادی مارچ پر معاہدہ ہو گیا

اپوزیشن کی راہبر کمیٹی نے شاندار گگلی پھینکتے ہوئے بلا روک و ٹوک وفاقی دارالحکومت میں داخلہ کی اجازت حاصل کر لی ہے ۔راہبر کمیٹی نے حکومت کو یقین دہانی کرائی ہے کہ ریڈ زون میں داخل نہیں ہونگے لیکن معاہدہ میں یہ شق بھی شامل کرائی ہے کہ حالات کے مطابق روزانہ کی بنیاد پر فیصلے کریں گے ۔ راہبر کمیٹی نے بظاہر کمزور لیکن صحت مند وزیردفاع کی سربراہی میں حکومتی کمیٹی سے معاہدہ کیا ہے کہ آزادی مارچ کے شرکا اسلام آباد میں قیام کریں گے لیکن…

جے یو ائی کو کراچی میں مارچ کی اجازت۔

سندھ حکومت نے جمیعت علما اسلام کو کراچی میں یوم یکجہتی کشمیر کیلئے ریلی کی اجازت دے دی ہے ۔ مشروط اجازت میں ریلی کے قائدین اس کے پرامن ہونے کی ضمانت دیں گے ۔27 اکتوبر کو ریلی صبح دس بجے شروع ہو ہوگی اور مقررہ وقت پر اختتام پزیر ہو جائے گی ۔

چلی میں امریکہ نواز حکومت کے خلاف عوام سڑکوں پر نکل ائے ۔

ایک کروڑ ستر لاکھ آبادی کے ملک چلی میں ہفتہ کے روز لاکھوں لوگ امریکہ نواز حکومت اور معاشی بدحالی کے خلاف سڑکوں پر نکل آئے ۔ لاکھوں لوگوں نے حکومت کی امریکہ نواز پالیسوں اور عوامی جموریہ چین کے اربوں دالر کے منصوبے سرد کانہ میں دالنے کے خلاف پرامن احتجاج کیا تاہم چند گھنٹے کے بعد احتجاج اس وقت پرتشدد ہو گیا جب پولیس نے مارچ کے شرکا کو دارالحکومت کے مرکزی چوک میں جانے سے روکا ۔

ظلم سے سیاست دان طاقتور ہوتے ہیں ۔ محمد ندیم

موروثی سیاست کو پروان چڑھانے والے ہی اصل میں سیاستدانوں کو چور اور ڈاکو مشہور کرتے ہیں ۔ عدلیہ میڈیا اور کسی جماعت کو اپنا حلیف بناتے ہیں ، سیاسی جماعتوں کے بطن سے مسلم لیگ اور پاکستان پیپلز پاررٹی پٹریاٹ برامد کرتے ہیں اور غداری کے سرٹیفکیٹ بھی بڑے پیمانے پر بانٹتے ہیں ۔ بھٹوز پر اور نواز شریف پر ظلم کرتے ہیں ۔ عوام اس ظلم کے ردعمل میں انہیں ووٹ دیں تو عوام کو جاہل اور ان پڑھ کہہ کر پکارتے ہیں۔ جب کٹھ پتلی سیاستدان بنائیں…